Caravan of spiritual babes 32

روحانی بابا کاسینکڑوں گاڑیوں کا قافلہ-جانئیے پوری بات

انڈیا میں صوفی طرز کے بابوں اور سادھو سنتوں کی روایت بڑی پرانی ہے لیکن گذشتہ تیس چالیس برس میں بابوں کی روایت روحانیت سے نکل کر معیشت پر مرکوز ہونے لگی ہے۔ پورے ملک میں بابوں کا سلسلہ پھیلا ہوا ہے۔ ذات پات، معاشرتی پیچیدگیوں اور جدید دور کی مشکلات نے ان مذہبی رہنماؤں کو انتہائی مقبول بنا دیا ہے۔ ان کے کروڑوں پیروکار ہوتے ہیں۔ جب یہ نکلتے ہیں تو ان کے آگے پیچھے سینکڑوں گاڑیوں کا قافلہ چلتا ہے۔ ان میں سے کئی ایسے ہیں جن کے اپنے ٹی وی چینل بھی ہیں۔ کچھ رہنما روزانہ ٹی وی پر وعظ بھی دیتے ہیں۔
لیکن بابوں کو اس طرح کی کامیابی ہرگز نہ ملتی اگر انھیں سیاسی پشت پناہی حاصل نہ ہوتی۔

 Caravan of spiritual babes
Caravan of spiritual babes
 Caravan of spiritual babes
Caravan of spiritual babes
 Caravan of spiritual babes

Caravan of spiritual babes

حکمراں سیاسی جماعتیں ان کی مقبولیت اور اثر رسوخ کی بنیاد پر انھیں بڑی بڑی زمینیں الاٹ کرتی ہیں اور ان کی فلاحی سکیموں اور پروگراموں کے لیے بڑے بڑے چندے سرکاری خزانے سے دیتی ہیں۔ چونکہ ان بابوں کے کروڑوں لوگ مرید ہوتے ہیں اس لیے سیاسی رہنما ان سے قربت حاصل کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ سیاسی جماعتیں انتخابات کے وقت اپنی مدد کے عوض ان بابوں سے اپنے حق میں حمایت حاصل کرتی ہیں۔ گذشتہ پارلیمانی انتخابات میں بی جے پی کی جیت میں کئی بابوں نے اہم کردار ادا کیا تھا۔
ان سبھی بابوں کے کچھ پہلو مشترک ہیں۔ ان سبھی کا گہرا تعلق سیاست سے ہے۔ سیاسی حمایت سے ہی ان کا عروج اور زوال ہوتا ہے۔ کسی تجزیہ کار نے کہا تھا کہ یہ بابے روحانیت اور عرش کی بات کرتے ہیں لیکن ان کی نظر عرش پر کم اور فرش پر زیادہ ہوتی ہے۔ یہ بڑی بڑی زمینوں اور املاک کے مالک ہیں۔ سیاست میں وہ کافی متحرک ہیں۔ معیشت اور سیاست میں ان کی بڑھتی ہوئی سرگرمیاں ہی ان کے زوال کا سبب بنتی ہیں۔

Facebook Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں