husan e ikhlaq 93

صاحب خلق عظیم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ:

صاحب خلق عظیم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ:
تم میں سے وہ شخص مجھے سب سے زیادہ محبوب ہے جس کے اخلاق سب سے اچھے ہیں-
ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم:
اس حدیث میں اچھے اخلاق کی اہمیت اور فضیلت بیان کی گئی ہے – اس سلسلہ میں آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے ارشادات لاتعداد ہیں- اس سے اس حقیقت کی نشاندہی ہوتی ہے کہ حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی نظر میں اخلاق کی اہمیت کس قدر زیادہ تھی –
ارشاد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے :
ترجمہ: مسلمانوں میں کامل ایمان اس کا ہے جس کے اخلاق سب سے اچھے ہوں-تم میں سے زیادہ میرا محبوب اور آخرت میں مجلس میں مجھ سے زیادہ نزدیک وہ لوگ ہوں گے جو تم میں خوش خلق ہیں -(ترمزی)
خوش خلقی افضل ترین عمل ہے – صحابہ کرام ّ نے ایک دفعہ حضور اکرم صلی اللہ علیہ وسلم سے دریافت کیا اے اللہ کے رسول ! انسان کو جو چیزیں دی گئی ہیں اس میں سے افضل ترین کون سی ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا “خوش خلقی“ -ایک شخص نے سوال کیا دین کیا ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے جواب دیا “خوش خلقی “- ایک اور شخص نے پوچھا اعمال میں افضل کونسا عمل ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا “ حسن خلق“- ایک جگہ یہ بھی ارشاد ہے کہ اچھا اخلاق اللہ کا بیترین عطیہ ہیں -حسن خلق جنت میں داخلہ کی ٹکٹ ہے – آنحضور صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھا گیا کونسی چیز سب سے زیادہ جنت میں داخلہ کا باعث ہوگی؟آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا “ تقویٰ اور حسن خلق“-
قرآن کریم نے صاف کہا اور دوست دشمن کے سامنے علی الاعلان کہا : ترجمہ: اور بے شک آپ صلی اللہ علیہ وسلم بلند ترین اخلاق پر فائز ہیں- ایک اور جگہ پر ارشاد باری تعالیٰ ہے
ترجمہ: اے اللہ! تونے اپنے فضل سے میرے جسم کی ظاہری بناوٹ اچھی بنائی ہے اسی طرح میرے اخلاق بھی اچھے کردے-(راوہ احمد)

Facebook Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں